مرکز
1 2 3

آبی ذخائر کے احیا کی مہم

انٹرنیشنل وزیٹر لیڈر شپ  پروگرام سے سرفراز ارون کرشنا مورتی ماحولیاتی تحفظ کے کام کرنے والے رضاکاروں اور کارکنوں کی نئی نسل کو ترغیب دینے کا کام کر رہے ہیں ۔ 

ارون کرشنا مورتی نے گوگل کی اپنی شاندار ملازمت کو خیر باد کہہ کر ایک بامقصد کام کرنے کا فیصلہ کیا اور وہ کام تھا ہندوستان کی آلودہ جھیلوں اور ندیوں کو ان کی اصل شکل میں واپس لانا ۔ ۲۰۱۱ء  میں انہوں نے انوائرونمینٹلسٹ فاؤنڈیشن آف انڈیا (ای ایف آئی )تشکیل دی۔چنئی میں واقع یہ ایک غیر سرکاری تنظیم ہے جو لوگوں کی شراکت داری کے ذریعہ سائنسی تحقیق اور ماحولیاتی تحفظ پر توجہ دیتی ہے ۔ کرشنا مورتی اور  ۹۰۰ نوجوان رضاکاروں پر مشتمل ان کی ٹیم صرف آبی ذخائر کو اس کی اصل شکل میں واپس لانے کا کام ہی نہیں کرتی بلکہ وہ شجر کاری کا بھی عمل انجام دیتی ہے ۔اس کے ساتھ ہی وہ جڑی بوٹیوں کو ان کی اہمیت دلانے، کوڑا کرکٹ کے بندوبست کی تعلیم دینے،  بایو اسپاٹس قائم کرنے ، سماج میں بیداری پھیلانے کی مہم کا انعقاد کرنے اور دستاویزی فلم تیار کرنے کا بھی کام انجام دیتے ہیں ۔انہوں نے ۲۰۱۰ ء میں ماحولیات سے متعلق آئی وی ایل پی میں شرکت کی جو امریکی وزارتِ خارجہ کی جانب سے پیشہ ورافراد کے لئے چلایا جانے والا پروگرام ہے۔  پیش ہے ان سے لئے گئے انٹرویو کے کچھ اقتباسات۔

 

ہندوستانی جھیلوں اور جنگلاتی زندگی کے بارے میں پہلا تجربہ آپ کوکیسے ہوا؟ آپ نے کب اسے اپنی توجہ کا مرکز بنایا؟

میں مضافاتی چنئی میں پلا بڑھا جہاں ندیوں میں مختلف قسم کی مخلوقات زندگی بسر کرتی ہیں اور مختلف قسم کے جانور پائے جاتے ہیں۔ یہاںہونے والی میری پرورش نے مجھے زندگی کے بارے میں کئی سبق سکھائے۔ اس حقیقت نے کہ اس سیّارے میں بہت ساری مخلوقات زندگی گزارتی ہیں ،میرے عقیدے میں مضبوطی سے گھرکیا اور یہی وجہ ہے کہ ماحولیات کے تئیں میری محبت میری زندگی کا ایک اٹوٹ حصہ بن گئی۔ 

گوگل میں ملازمت کے دوران وہ کون سی اہم ترین باتیں تھیں جنہیں آپ نے اب تک یاد رکھا ہے؟ وہ کون سی چیز تھی جس نے آپ کو   انوائرونمینٹلسٹ فائونڈیشن آف انڈیا کی تشکیل کی ترغیب دی؟

گوگل نے مجھے اپنے دائرے سے باہر کے بارے میں اور تجارت کی دنیا کے بارے میں تفصیل سے غور و فکر کرنا سکھایا ۔ میں نے کالج کے دنوں میں ہی اپنااین جی او بنانے کے بارے میں سوچنا شروع کر دیا تھا ۔ اسے میں حقیقت کی شکل اس وقت دے سکا جب میں گوگل میں ملازمت کر رہا تھا۔گوگل کو خیر باد کہنے کا فیصلہ اتنا آسان نہیں تھا لیکن آخر کار ماحولیات کے تحفظ کا میرا عزم اتنا مضبوط ہوگیا کہ ایک دن میں نے گوگل کو چھوڑنے کافیصلہ کر ہی لیا ۔

انٹر نیشنل وزیٹر لیڈرشپ پروگرام کے تجربے نے آپ کی پیشہ ورانہ زندگی پر کس طرح اثر ڈالا؟ 

آئی وی ایل پی کے دورے نے عالمی سطح پر لوگوں کے رابطے میں آنے میں اور علم کے ذرائع کو وسعت دینے میں میری مدد کی۔یہ میرے لئے ایک اہم موقع ثابت ہوا اور اس سے مجھے آگے بڑھنے کے لئے بہت ضروری اعتماد حاصل ہوا۔

آپ طبقات میں موجود شراکت داری کے جذبے تک کیسے رسائی حاصل کرتے ہیں ؟ ماحولیاتی منصوبوں پر کام کرتے ہوئے آپ لوگوں میں شراکت داری اور شہری ہونے کے فخرکے جذبے کو کیسے فروغ دیتے ہیں ؟ 

تقریباََ ہر شخص ایک وسیع ماحول میں خراب ہوتے ہوئے حالات کے بارے میں فکر مند ہے اور اس میں بہتری کے لئے اپنی خدمات پیش کر نے کا خواہش مند ہے۔ اب اس معاملے میں چیلینج یہ ہے کہ کچھ کرنے کی ان کی خواہش کو واقعی کچھ کرپانے سے کیسے منسلک کیا جائے ۔ تحفظ کے کام کی خاطر شہری ایک واضح پلیٹ فارم کے فقدان کا سامنا کرتے ہیں ۔ ای ایف آئی کا مقصد ایک پلیٹ فارم کی خدمات انجام دینا ہے جو لوگوں کو سرگرمی سے شراکت داری کے لئے تعلیم فراہم کرے اور ترغیب بھی دے۔ لوگوں کی باتیں سن کر کہ وہ کون سی تبدیلیاں دیکھنا چاہتے ہیں ،ہم انہیں وہ تبدیلی لانے کی ترغیب دیتے ہیں۔ 

ماحولیاتی تحفظ کی کوششوں کے تئیں شہروں میں پائے جانے والے سر د رویئے اور ایک مربوط کثیر جہتی تعاون کی کمی کے آپ ناقد رہے ہیں ۔آپ کے خیال میں مستقبل میں یہ کس طرح بہتر ہو سکتا ہے؟

میں یقین کے ساتھ تو نہیں کہہ سکتا کہ کس طرح یہ تبدیلی آئے گی لیکن میرا خیال ہے کہ تبدیلی ضرور آئے گی ۔ جب تک ہم لوگ ساتھ کام نہیں کریں گے، آنے والی نسلوں کے لئے زندگی آسان نہیں ہوگی ۔ہمیں یہ سمجھنے کی ضرورت ہے کہ ماحولیاتی تحفظ کی ہماری مہم صر ف ہمارے اطراف کے قدرتی مناظرکی حفاظت کے لئے نہیں ہے بلکہ اس بات کو بھی یقینی بنانے کے لئے ہے کہ آنے والی نسلیں اس عظیم سیّارے میں اپنی زندگی سے لطف اندوز ہو سکیں۔ہم لوگ ہر ایک چیز کے لئے اس پر منحصر ہیں اور یہ بھی حقیقت ہے کہ ہم لوگ شہروں میںپائے جانے والے سر د رویئے اور بصیرت میں کمی کی وجہ سے اسے جھٹلا نہیں سکتے ۔

اب تک انوائرونمینٹلسٹ فائونڈیشن آف انڈیانے ندیوں اور جھیلوں کو ان کی اصل شکل میں واپس لانے کے کتنے منصوبے مکمل کئے ہیں؟

 انوائرونمینٹلسٹ فائونڈیشن آف انڈیانے پورے ہندوستان میں اب تک ۱۹ تالابوں اور ۶ جھیلوں کو ان کی اصل شکل میں واپس لانے کا کام مکمل کیا ہے جب کہ ۵۴ دیگر آبی ذخائر پر کام جاری ہے۔ ہم لوگ کبھی بھی کسی منصوبے کو مکمل کئے بغیر نہیں چھوڑتے۔ کام مکمل ہونے کے بعد بھی ہم لوگ وہاں کے کام کاج کی نگرانی کرتے رہتے ہیں۔ 

انوائرونمینٹلسٹ فاؤنڈیشن آف انڈیا  کے کچھ مقاصد کیا ہیں؟ 

ماحولیاتی تحفظ کی کوششوں میں ہم خیال شہریوں کی رضاکارانہ شراکت کو یقینی بنانا ہمارا آسان سا مقصد ہے۔اور نتیجہ پر مبنی اور صحیح وقت پر مکمل کئے جانے والے منصوبے ہماری توجہ کا واحد مرکزر ہیں گے۔ نئے نئے ارکان کے ساتھ انوائرونمینٹلسٹ فائونڈیشن آف انڈیا  تیزرفتاری سے ترقی کرتا جا رہاہے ۔ہم نئے علاقوں میں اپنے کام کی توسیع کر رہے ہیں۔ مستقبل قریب میں  انوائرونمینٹلسٹ فائونڈیشن آف انڈیا سری لنکا اور بھوٹان میں بھی ای ایف ایس  اور  ای ایف بی  کی شکل میں اپنی شاخیں قائم کرنے جارہا ہے ۔ 

ماحولیاتی تحفظ اور جنگلاتی زندگی کے تحفظ میں دلچسپی رکھنے والوں کے لئے آپ کے کیا مشورے ہیں؟

۱۔ اپنے گھر وں سے نکلیں، باہر جائیں، قدرتی ماحول تلاش کریں اور اسے سمجھنے کی کوشش کریں۔

۲۔ اپنی ذاتی زندگی پر توجہ دیں۔ کوڑے کے بندوبست ، پانی اور توانائی کے تئیں بیدار مغزی کا ثبوت دیں۔ 

۳۔ ایک انسان کی طرح اپنی زندگی جینا شروع کریں نہ کہ ایک صارف کے طور پر۔ 

 

جیسون چیانگ لاس اینجلس کے سلور لیک میں مقیم ایک آزاد پیشہ قلمکار ہیں۔   

 

تبصرہ کرنے کے ضوابط