مرکز

اسپین بلاگ

ارضی حرارت پر مبنی توانائی
مَیٹ ہیلانڈ
| زمرہ: سائنس و ٹیکنالوجی

 دنیا کا سب سے بڑا اکتشاف طلب وسیلہ

 
ارضی حرارتی توانائی ، توانائی کی ایسی قسم ہے جو زمین سے حاصل کی جاتی ہے۔ جیو تھرمل سے مراد زمین کی اندرونی حرارت ہے۔زمین کی سطح میں بہت گہرائی میں گرم پانی ، گرم چٹان اور پگھلے ہوئے لاوا کی تہیں موجود ہیں ۔ ارضی حرارتی توانائی زمین کی گہرائی میں موجود ان مختلف پرتوں سے نکلتی ہے ۔یہ مختلف علاقوں کو حرارت پہنچانے کے کام تو آہی سکتی ہے ، اس سے ٹھنڈک بھی پہنچائی جا سکتی ہے۔  
 
یہ توانائی کیسے کام کرتی ہے اور کہاں سے آ تی ہے ۔ 
زمین ابتداء میں ایک مکمل طور پر پگھلی ہوئی حالت سے موجودہ حالت تک پہنچی ہے۔ایسا مانا جاتا ہے کہ ہزاروں سال پہلے ٹھنڈی ہوکر یہ مکمل طور پر ٹھوس چٹان میں تبدیل ہوگئی ہوتی اگر اسے ملنے والی توانائی اور گرمی صرف سورج سے مل رہی ہوتی۔ سائنسدانوں کا خیال ہے کہ ارضی حرارتی توانائی کا ذریعہ زمین کے اندر بہت گہرائی میں جاری تابکاری کے زوال کا نتیجہ ہے۔  
 
اس حقیقت کے باوجود زمین کی داخلی حرارت سے حاصل ہونے والی توانائی کا ایک بہت چھوٹا سا حصہ ہی استعمال میں لایا جا سکتا ہے۔ یہ کام صرف انہیں علاقوں میں کیا جا سکتا ہے جہاں پانی بھاپ بن کر حدّت کو زمین کی اوپری سطح تک منتقل کر سکے۔کیلی فورنیا میں ایک ارضی حرارتی میدان ہے جسے گیزرس کے نام سے جانا جاتا ہے۔ یہ پوری دنیا میں ارضی حرارتی آبی تنصیبات کے سب سے بڑے گروپوں میں سے ایک ہے۔  امریکہ میں ہر سال تقریباََ ۱۵بلین کلو واٹ گھنٹے کی جیوتھرمل توانائی پیدا کی جاتی ہے۔یہ ہر سال ۲۵ ملین بیرل تیل ۶ ملین ٹن کوئلہ جلانے کے برابر ہے۔ 
 
فی الحال ارضی حرارتی توانائی کاایک اہم استعمال تجارتی عمارتوں کے لئے گرمی فراہم کرنا ہے ۔ یہ گرمی عمارتوں کے نیچے پائپ ڈال کر حاصل کی جاتی ہے ۔ ان پائپوں کو زمین کی تہوں میں بہت اندر تک اتارا جاتا ہے ۔ اس عمل سے جو حرارت حاصل ہوتی ہے اسے ان عمارتوں کو گرم یا ٹھنڈا کرنے کے لئے استعمال کیا جاتا ہے ۔ مگر اس قسم کی توانائی کا سب سے عام استعمال بجلی پیدا کرنے کے لئے ہوتا ہے ۔ ایسے کنویں بنائے گئے ہیں جنہیں جیو تھرمل ویلس کہا جاتا ہے ۔ ان سے ٹربائن
چلایا جاتا ہے جو بجلی پیدا کرتا ہے ۔ 
 
چونکہ ارضی حرارتی توانائی کا انحصار کسی ایسی چیز پر ہے جو زمین میں بہت گہرائی میںفطری طور پر رونما ہو تی ہے، اس لئے اسے استعمال کرنے کی لاگت بہت کم ہے ۔اس سلسلے میں آنے والا سب سے زیادہ خرچ زمین کے کھودنے اور وہاں ضروری نظام کی تنصیب پر آتا ہے۔ اس سے قطع نظر گرم کرنے یا ٹھنڈا کرنے کے لئے بہت کم توانائی کی ضرورت پڑتی ہے۔ درجہ حرارت کو بڑھا نے یا اسے کم کرنے کی جو ضرورت ہے وہ کمرہ کے اندر درکار درجہ حرارت کو باہر کے درجہ حرارت سے ہوا لے کر ٹھنڈا یا گرم کرنے کے لئے استعمال ہو نے والے روایتی طریقوں سے بہت کم ہے ۔ اس کا ایک سبب یہ ہے کہ درجہ حرارت کو کم کر نے یا بڑھا نے یعنی کمرہ کو گرم کرنے یا ٹھنڈا کرنے کے لئے جو درجہ حرارت مطلوب ہو تا ہے وہ دس ڈگری سے زیادہ نہیں ہوتا۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ درجہ حرارت میں اس تبدیلی کے انتظار میں جو وقت لگتا ہے وہ بہت کم ہے اور مطلوب درجہ حرارت حاصل کر نے میں توانائی کا خرچ بھی کم ہے ۔ 
بڑے وسائل کے باوجود ارضی حرارتی توانائی ،بادی توانا ئی اور شمسی توانا ئی کے منصوبوں کے مقابلے میں بہت پیچھے ہے ۔
 
امریکہ کے مغربی حصے میں جیو تھرمل توانائی سے فیضیاب ہونے کا امکان سب سے زیادہ ہے۔جیو تھرمل بجلی گھروں کے ساتھ نزاکت یہ ہے کہ ان کی تنصیب بہت مخصوص مقامات ہی پر ہو سکتی ہے۔ ان کو صرف ان مقامات پر لگایا جا سکتا ہے جہاں زیرِ زمین بہت گرم پانی کے زیادہ بڑے ذخائر موجود ہوں ۔مغربی ریاستوں میں ٹرانس میشن لائن کی کمی کی وجہ سے توانائی کے اس ذریعہ کا فروغ محدود ہو کر رہ گیا ہے۔ایک دوسری بڑی رکاوٹ یہ ہے کہ ایک جیو تھرمل پاور پروجیکٹ قائم کرنے میں چار سے آٹھ برس تک کا وقت لگتا ہے جو کہ شمسی توانائی کے پینل لگانے یا بادی توانائی کے منصوبے قائم کرنے میں لگنے والے وقت کے مقابلے میں بہت زیادہ ہے۔ 
جیسے جیسے ٹکنالوجی ترقی کر رہی ہے امید کی جارہی ہے کہ ارضی حرارتی بجلی کے کارخانے لگانے کے وقت میں خاصی کمی آئے گی۔ اور ایسا ہوتے ہی ہم اس قابل ہوجائیں گے کہ قابلِ تجدید توانائی کے بہت سنبھال کر رکھے گئے وسیلے سے انتہائی سستی بجلی بناکر اس کا استعمال کرسکیں ۔ 
 
 

ذرائع :

www.eia.gov/todayinenergy/detail.cfm?id=3970

www.nrel.gov/

www.greenfacts.org/en/geothermal-energy/index.htm

 

مَیٹ ہیلانڈ فلوریڈا کی نارتھ امیریکن انرجی ایڈوائزری کے سنیئر وائس پریزیڈنٹ ہیں ۔ 

 
 

تبصرہ کرنے کے ضوابط