مرکز
1 2 3

مینارے،خیاباں، سبزہ زار

امریکہ کے بعض انتہائی پرکشش اور خوبصورت کالج احاطوں اور ان کی امتیازی عمارتوں کا ایک تصویر ی جائزہ۔

امریکہ کے جد ید کالجوں اور یونیورسٹیوں کے احاطے اپنے محل وقوع، سائز، طلبہ اور تعلیمی مشن جیسے کسی بھی حوالے سے ملک کے تنوع کی عکاسی کرتے ہیں۔ اتنا ہی نہیں اکثروہ روایتی گوتھک، نو کلاسیکی اور جدید طرز تعمیرکے امتزاج، سبز ہرے بھرے راستوں اور کالج کی زندگی میں مراکز کی حیثیت کے حامل کشادہ سبزہ زاروں سے روایت کی پر زور کشش کا بھی مظاہرہ کرتے ہیں۔ امریکہ کے سینکڑوں چھوٹے بڑے کالجوں میں سے نمایاں چند کو یہاں بطور مثال پیش کیا جا رہا ہے جوا پنی شاندارعمارتوں اور خوبصورت ا و رد لکش محل وقوع کی وجہ سے قابل توجہ ہیں۔

کین یون کالج
کین یون کالج لبرل آرٹس کا ایک انتہائی قابل احترام کالج ہے ۔یہ مرکزی اوہائیومیں ایک دلکش پہاڑی پر واقع ہے جہاں امریکہ کے قدیم گوتھک طرز تعمیر کی کچھ نفیس ترین مثالیں دیکھی جاسکتی ہیں۔ اولڈ کین یون ہال ۱۸۲۷ میں تعمیر ہوا تھا اور یہ شائد ملک میں اس نوعیت کی قدیم ترین گوتھک عمارت ہے۔ پورے احاطہ کی لمبائی میں تین میٹر چوڑی ایک پگڈنڈی دوڑتی ہے جسے مڈل پاتھ کہتے ہیں۔ یہ راستہ کا کام دیتی ہے اور اس کے ارد گرد کے سبزہ زار دیہی ہریالی اور سبزہ کی طرح ہیں جہاں طالب علم جمع ہوتے ہیں۔ ایک اور نمایاں عمارت روسے ہال ہے۔یہ کین یون کا کنسرٹ اور لکچر ہال ہے جس کی تعمیر ۱۸۳۰کی دہائی میں ہوئی تھی۔

براؤن یونیورسٹی
بر اؤن یونیورسٹی آئی وی لیگ کی گراں قدر یونیورسیٹیوں میں سے ایک ہے مگر اس کی اس حیثیت نے اسے۲۰۱۱ میں تخلیقی آرٹس کے پیری اینڈ مارٹی گرینوف سنٹر کی تعمیر سے نہیں روکا ۔ یہ ایک اختراعی کھلی ہوئی عمارت ہے جس کی دیواریں شفاف ہیں۔ یہ عمارت فن کارانہ تعاون کے فروغ کے لئے ڈیزائن کی گئی ہے۔

اس کی سب سے ڈرامائی خصوصیت ایسی منزلیں ہیں جو دو ٹکڑوں میں بٹ جانے یا الگ ہوجانے کی اہل ہیں۔ ہر آدھی منزل دیگر دو منزلوں سے جڑجاتی ہے اور اس طرح اعلیٰ درجہ کے فن کارانہ تعاون کا ماحول بنانے میں مدد گار ہوتی ہے۔

اس مرکز میں متعدد اور مختلف قسم کی فن کارانہ کاوشوں کے لئے کافی جگہیں ہیں۔ان میں پرفارمنگ آرٹس اور فلم کے لئے ایک آڈیٹوریم ہے جس میں ۲۰۰ لوگوں کے بیٹھنے کی گنجائش ہے ، بصری فنون کی ایک گیلری ہے۔ چاربین شعبہ جاتی پروڈکشن اسٹوڈیو ہیں، صدابندی اسٹوڈیو ہے، ملٹی میڈیا لیب ہے، آؤٹ ڈور ایمفی تھیٹرہے اور سنسرس، روبوٹکس اور زیادہ جدید کمپیوٹنگ ٹکنالوجی کا استعمال کرکے تخلیق کے لئے فزیکل میڈیا لیب بھی ہے۔

براؤن یونیورسٹی ۱۷۶۴ میں قائم کی گئی تھی جو روڈے آئی لینڈ پر واقع ہے اور یہ امریکہ میں اعلیٰ تعلیم کے قدیم ترین اداروں میں سے ایک ہے۔

یونیورسٹی آف ورجینیا
ایسے کالج اور یونیورسٹیوں کے احاطے کم ہیں جن میں امریکہ کی ابتدائی تاریخ نظر آتی ہو۔ ان میں ایک کیمپس شرلوئس ولے میں واقع یونیورسٹی آف ورجینیا کاہے جسے امریکہ کے تیسرے صدر تھومس جیفرسن نے ’’ علمی گاؤ ں‘‘ کے طورپر بسایا تھا۔

جیفرسن نے اس محراب نماعمارت روٹنڈا کا ماڈل روم کی ایک زیارت گاہ کے طرز پر تیار کرایا تھالیکن اس کا طول و عرض کم کردیا تھا تاکہ لان کے نام سے مشہور اس یونیورسٹی کی اہم اور مشہور سبزہ گاہ کے دونوں طرف واقع عمارتوں کے درمیان روٹنڈا موزوں نظر آئے۔

۱۸۹۵میں روٹنڈا ایک بھیانک آگ میں تباہ ہوگیا۔ اس کے بعدروٹنڈا کی تعمیر نو واضح فرانسیسی طرز تعمیربیوکس آرٹ کے طرز پرہوئی۔ معماروں نے۱۹۷۶ میں جیفرسن کا اصل ڈیزائن بحال کردیا۔اب یہ یونیسکو کی تسلیم شدہ عالمی تاریخی یادگاروں میں شامل ہے۔ ورجینیا آج بھی امریکہ کی قائدانہ سرکاری یونیورسٹیوں میں سے ایک ہے۔

ہارورڈ یونیورسٹی
اگرچہ ہارورڈ یونیورسٹی کے قیام کی بالکل درست تاریخ اب بھی متعین نہیں ہوپائی ہے مگر اس کے اس دعوے کو ماننے سے بہت کم لوگ انکار کرتے ہیں کہ وہ امریکہ میں اعلیٰ ترین تعلیم کی سب سے پرانی درسگاہ ہے۔ اصل احاطہ مساچیوسٹس، کے کیمبرج میں واقع ہے۔

ہارورڈ گزٹ کے مطابق ’’اینٹ کی بنی ہوئی عمارتیں اور نئے جارجیائی ریورہاوسز آئی وی کلاسیکی کی متوقع شبیہ پیش کرتے ہیں لیکن اصل میں اس یونیورسٹی میں ہر طرح کے طرز تعمیر کی نمائندگی کرنے والی عمارتیں ہیں اس حد تک کہ اگر سب کو یکجا کرلیا جائے تو امریکی فن تعمیر کی ایک غیر رسمی تاریخ مرتب ہوجاتی ہے۔‘‘ ان تاریخی عمارتوں میں سے ایک ہارورڈ یونیورسٹی لائبریری ہے۔

ہارورڈ یونیورسٹی لائبریری کی نمایا ں عمارتوں میں سے ایک بیوکس آرٹس وائڈنر لائبریری ہے جو پہلی بار ۱۹۱۵ میں کھلی۔اس میں تین ملین سے زائد کتابیں ہیں۔ ہارورڈ بزنس اسکول ۱۹۰۸ میں قائم کیا گیا۔ یہ اسکول ’’کیس اسٹڈی‘‘ طریقہ کار میں اپنے پیش رو ہونے کی وجہ سے مشہور ہے۔ چارلس ندی کے بوسٹن کی طرف جارجیائی طرز کی متعدد عمارتوں پر یہ اسکول مشتمل ہے۔

ییل یونیورسٹی
ییلیونیورسٹی نیوہیون، کنکٹی کٹ میں ہے۔ یہ فن تعمیر کا ایک اہم نمونہ ہے۔ گوکہ اس کے احاطہ میں زیادہ تر جارجیائی اور گوتھک احیائی طرز تعمیر کی روایتی پتھر کی عمارتیں واقع ہیں مگر ییل میں کچھ عمارتیں ۲۰ ویں صدی کے دنیا کے بعض انتہائی مشہور آرکیٹکٹوں کی ڈیزائن کی ہوئی بھی ہیں۔

ییل یونی ورسٹی کی آرٹ گیلری جس عمارت میں ہے اس عمارت میں قدیم و جدید دونوں عناصر یکجا ہیں۔ اصل ڈھانچے کی تعمیر ۱۹۲۸ میں مکمل ہوئی۔ اس میوزیم کی جدید اینٹ اور شیشے پر مشتمل شاخ کا ڈیزائن ممتاز آرکیٹکٹ لوئس کان کاتیار کردہ ہے۔ یہ ونگ ۱۹۵۳ میں کھلی اور اسے ییل کی پہلی جدید عمارت ہونے کا شرف حاصل ہے۔

کالج کی ہاکی ٹیم کا مرکز ایرو سارینن کا انگیلس رنک ہے جسے لوگ پیار سے ییل وھیل بھی کہتے ہیں جس کا سبب اس کی ہوا پوش چھت ہے۔ بی نک نادر کتابوں اور مخطوطات لائبریری اس طرح کی چیزوں کے لئے وقف دنیا کی سب سے بڑی عمارتوں میں سے ایک ہے۔ ییل یونی ورسٹی کی زیادہ نئی اور جدت طراز عمارتوں میں ماحولیات دوست ’’گرین‘‘ مجسمہ سازی عمارت ہے جو ۲۰۰۷ میں مکمل ہوئی۔

یونیورسٹی آف شکاگو
نیویارک یونیورسٹی کی طرح شہروں میں واقع اعلیٰ تعلیم کے بہت سے اہم اداروں میں سرے سے کالج یا یونیورسٹی کا کوئی کیمپس ہی نہیں لیکن یونیورسٹی آف شکاگو کے ساتھ ایسا نہیں ہے۔ خیال کیا جاتا ہے کہ یونیورسٹی آف شکاگو کا احاطہ ملک میں انتہائی عمدہ شہری کیمپسوں میں سے ایک ہے۔ اس کا ایک سبب دلکش ہائیڈ پارک آبادی ہے ۔ صدر بارک اوباما صدر بننے سے پہلے یہیں رہتے تھے۔ اس میں ایک سلنڈرگرین پارک ہے جسے مڈوے کے نام سے جانا جاتا ہے۔ یہ ۲۰۰ میٹر چوڑا راستہ کیمپس اور آس پاس کے محلوں سے ہوکر گزرتا ہے۔

شکاگو میں نیو گوتھک فن تعمیر کا سب سے عمدہ مجموعہ دیکھا جاسکتا ہے۔ اس کا ایک بڑا سبب اس کے اصل سرپرست جان ڈی راک فلرہیں جو برطانیہ میں آکسفورڈ یونیورسٹی کی عمارتوں کی نقل کرکے اس یونیورسٹی کا وقار بلند کرنا یقینی بنانا چاہتے تھے۔ تاہم یہ یونیورسٹی ایک ایسے شہر کا جز ہے جو اپنے جدید طرز تعمیر کی وجہ سے جانی جاتی ہے۔ آج اس یونیورسٹی میں بہت سی نمایاں جدت طراز عمارتیں ہیں۔ ان میں اسکول آف سوشل سروس کی انتظامی بلڈنگ بھی شامل ہے جسے مائس وین ڈیرروہے نے ڈیزائن کیا ہے اور لاء اسکول کی عمارت جس کا ڈیزائن ایرو سارینن نے بنایا۔

بالکل نئی من سیوٹو لائبریری مئی ۲۰۱۱ میں قائم کی گئی جہاں شیشے کے ایک محراب کے نیچے کئی ملین کتابیں زیر زمین رکھی گئی ہیں۔

لیوس اینڈ کلارک کالج
ایک ہری بھری پہاڑی پر واقع کالج ایک محفوظقدرتی مقام سے متصل ہے۔ اس پر یقین کرنا دشوار ہے کہ لیوس اینڈ کلارک اوریگون کے پورٹ لینڈ میں واقع سچ مچ ایک شہری کالج ہے۔ ایک تو اس کا ہرا بھرا سرسبز ماحول اور دوسرے اس کا مثالی فن تعمیر دونوں ایسی چیزیں ہیں جن کی وجہ سے پرنسٹن ریویو اور ایک آزاد فن تعمیر سے متعلق بلاگ اسٹرکچرہب نے اسے امریکہ کے اس انتہائی خوبصورت احاطوں میں سے ایک کا درجہ دیا ہوا ہے۔طلبہ کی بہت سی رہائش گاہوں کا کوئی نہ کوئی موضوع ہے۔ ملٹی کلچرل ڈورمیٹری اور ایکن ہال میں بین الاقوامی طلبہ اور بین الاقوامی تجربہ رکھنے والے امریکی طلبہ رہتے ہیں۔اس احاطے کا اصل مرکز فرینک مینور ہاؤس ہے۔ ۳۵ کمروں پر مشتمل ٹوڈور طرز کا ایک شاندار محل جو ۱۹۲۵ میں تعمیر ہوا تھا۔ یہ کالج کے انتظامی مرکز کے طور پر کام کرتا ہے۔ لیوس اینڈ کلارک کی بالکل نئی عمارت گریگ پویلین ہے جو کہ اس درسگاہ کی عبادتگاہ سے متصل ہے اور دعائیہ جلسوں ا ور اسٹیج پر فن کے مظاہرہ کے لئے استعمال کی جاتی ہے۔

یونیورسٹی آف کیلی فورنیا
برکلے
ورجینیا کے روٹنڈا سے بہت مختلف ایک تاریخی یادگار ایک اور ممتاز سرکاری یونیورسٹی کے احاطے میں کھڑی ہے۔ یہ یونیورسٹی آف کیلی فورنیا، برکلے کا۹۴ میٹر اونچا گھنٹہ گھر ہے ۔ اسے یہاں خلیج سان فرانسسکو میں جھانکتا ہوا دکھایا گیا ہے۔ پس منظر میں گولڈن گیٹ پل بھی دیکھا جاسکتا ہے۔ وینس میں سینٹ مارگو کے گھنٹہ گھر سے مطابقت رکھتے ہوئے اس گھنٹہ گھر کا نام کمپنیلے رکھا گیا ہے۔ یہ پوری دنیا میں گھنٹہ اور گھڑی والے ٹاوروں میں سب سے اونچا ہے۔ اس کے زبردست گھنٹے ۹ کلو سے ۴۸۰۰ کلو تک وزن کے ہیں۔ یہاں موسیقار ہر دن تین مختصر موسیقی پروگرام منعقد کرتے ہیں۔ برکلے کی پہاڑیاں ان نغموں سے گونجتی رہتی ہیں۔ اتوار کے دن کے موسیقی پروگرام دوسرے دنوں سے زیادہ طویل ہوتے ہیں۔

سانتا کروز اور سان ڈیاگو میں یونیورسٹی آف کیلی فورنیا کے سمندر کنارے واقع احاطوں کا محل وقوع زیادہ جاذب نظر ہوسکتا ہے مگر ۷۲ ہیکٹر پر پھیلا ہوا برکلے کیمپس ایک ہرا بھرا نخلستان ہے جہاں ۵۰۰ سے زائد اقسام کے مقامی پیڑپودے لگے ہیں اور سبزہ بکھرا ہوا ہے اور ایوکلپٹس کے خوشبودار باغات ہیں۔

آکسی ڈنٹل کالج
جنو بی کیلی فورنیا میں دلکش کالج کیمپسوں کی کوئی کمی نہیں ہے لیکن لاس اینجلس میں واقع آکسی ڈنٹل کالج کی طرح ممتاز احاطے کم ہیں جہاں بحرروم طرز کی ٹالیوں کی چھت والی عمارتیں دوسروں سے اس احاطے کو الگ کرتی ہیں۔ امریکہ کے مغربی ساحلوں پر لبرل آرٹس کا یہ قدیم ترین کالج ہے۔ یہ کیمپس ۱۹۲۰کی دہائی سے اب تک ہالی وڈ فلموں کی شوٹنگ کے لئے ایک بہت مقبول جگہ رہی ہے۔

آکسی ڈنٹل ایک چھوٹا کالج ہے۔ یہاں صرف ۲۱۰۰ طالب علم زیر تعلیم ہیں۔ اس کے ویب سائٹ thebestcolleges.org کے مطابق اس کالج کے احاطے میں شانداردرختوں کی قطاریں اور سماجی میل جول کی بہترین جگہیں ہیں۔ یہ کیلی فورنیا کی اعلیٰ ترین یونیورسٹیوں میں شمار کی جاتی ہے۔

ارڈ مین ہال ۱۹۲۷ میں کلاسیکی میڈی ٹرینین طرز پر تعمیر کیا گیا اس کیمپس کی انتہائی مقبول عمارتوں میں سے ایک ہے۔ یہاں مخلوط تعلیم کا بندوبست ہے اور ۸۰ طلبہ کے لئے رہائش گاہیں بھی فراہم کی جاتی ہیں۔ اس کالج میں سب سے زیادہ نمایاں اور فوری طور پر قابل شناخت ایک اہم مقام گل مین فوارہ ہے جہاں ایک متحرک آبی مجسمہ لگایا گیا ہے جسے ’’واٹر فارمسII ‘‘کہتے ہیں۔

اسٹین فورڈ یونیورسٹی
اسٹین فورڈ ۳۲۰۰ ہیکٹر کے رقبہ میں واقع ہے اور امریکہ کے بہت بڑے کیمپسوں میں سے ایک ہے۔ ہسپانوی طرز تعمیرسے متاثر طرزمیں جسے ’مشن ری وائیول‘ کے نام سے یاد کیا جاتا ہے، سینڈاسٹون اور سرخ ٹائل کی عمارتیں اس پورے احاطہ میں نظر آتی ہیں۔ اس یونیورسٹی کے طلبہ طالبات میں بھی نمایاں گوناگونی ہے۔ تقریباً ۶۰ فی صدا نڈر گریجویٹ طلبہ ایشیائی ، ہسپانوی، افریقی امریکی یا مقامی امریکی ہیں اور بقیہ بین الاقوامی ۔

کیمپس پالو آلٹو، کیلی فورنیا میں واقع ہے اوراس کے احاطہ میں ان گنت خوبصورت سبزہ زار ہیں جو کہ طلبہ کی سرگرمیوں کے مراکز ہیں۔ دلکشی کے ان مراکز میں ایک ۱۶۰۰ مربع میٹر کاخار دار اور رسیلے پودوں کا ایک باغ بھی ہے جسے کیکٹی اینڈ سکولنٹ گارڈن کہتے ہیں۔ایک آرٹس سنٹر بھی جس کے اندر ۲۴ آرٹ گیلریاں، مجسمہ باغ،اور پیرس کے باہر روڈن کے کانسے کے آرٹ ورک کے سب سے بڑے مجموعوں میں سے ایک مجموعہ بھی ہے۔نمایاں عمارتوں میں ۸۷ میٹر اونچا ہوور ٹاور، اسٹین فورڈ مقبرہ اور ’’دی ڈش‘‘ کے نام سے مشہور پہاڑی پر ایک بڑی ریڈیو دور بین شامل ہے۔

سوانی دی یونیورسٹی آف ساؤتھ
اگر امریکہ جنوب کے اسرار اگر کسی جگہ اکٹھا ہوسکتے ہیں تو یہ ایک یونیورسٹی ہے جسے سرکاری طور پر ’’سوانی: دی یونیورسٹی آف ساؤتھ‘‘ کے نام سے جانا جاتا ہے۔ ویسے یہ بھی سچ ہے کہ یہ یونیورسٹی ایک سرحدی ریاست ٹینیسی میں واقع ہے یعنی جنوب میں بہت دور نہیں (جس کی نمائندگی عام طور پر ساؤتھ کیرولینا، الاباما ،جارجیا، مسں سپی اور لوئسیانا وغیرہ کرتی ہیں) ۔

سوانی کا خوبصورت کیمپس اور قصبہ ایک پہاڑی کی چوٹی پر واقع ہیں جسے ’’ڈومین‘‘ کے نام سے جانا جاتا ہے یہ یونیورسٹی کل ملاکر ۵۳۰۰ ہیکٹر کے رقبہ میں پھیلی ہوئی ہے۔ اس احاطہ میں گوتھک طرز کی عمارتیں ہیں۔ ان میں ایک تمام عیسائی سنتوں کی عبادت گاہ’’آل سینٹس چیپل‘‘ بھی شامل ہے۔ سوانی ہی میں ٹینیسی ولمیس سنٹر واقع ہے جس کا نام ممتاز امریکی ڈرامہ نویس سے منسوب ہے۔ وہ اپنی ادبی مملکت اس یونیورسٹی کے لئے چھوڑگئے ہیں۔

پرنسٹن یونیورسٹی
نیوجرسی میں پرنسٹن یونیورسٹی امریکہ کی بہترین آئی وی لیگ یونیورسٹیوں میں سے ایک ہے۔ اسے اس کے بھورے رنگ کے پتھر کی نیوگوتھگ عمارتوں کی وجہ سے شہرت ملی ہے۔ یہ ایک ایسا اسلوب ہے جو پورے ملک کی یونیورسٹیوں کے احاطوں میں ،کنکٹی کٹ میں ییل یونیورسٹی سے نارتھ کیرولینا میں ڈیوک یونیورسٹی تک، ہر جگہ دیکھا جاسکتا ہے۔ فن تعمیر اور ڈیزائن سے تعلق رکھنے والے ایک بلاگ کلر کو ٹ میں لکھا گیا ہے کہ پورا احاطہ محرابی راستوں، بنچوں، فٹ پاتھ اور چوک سے بھرے ہوئے ایک وسیع و عریض کھلے ہوئے مقام کا احساس پیدا کرتا ہے۔

یہ پورا ماحول طالب علموں کو قدم بڑھاتے ہوئے فطرت کی گود میں اترجانے یا کسی علمی بحث میں شریک ہونے کی تحریک دیتا ہے۔

تاہم بیشتر کالج احاطوں کی طرح پرنسٹن میں بھی قدیم و جدید کا امتزاج ہے ۔ قد آور اور رنگا رنگ لیوس لائبریری کی طرح کی فن تعمیر کا جدید ترین نمونہ اس کی ایک مثال ہے۔ اس لائبریری میں پرنسٹن یونیورسٹی کا سائنس سے متعلق ایک بڑا مجموعہ موجود ہے۔ جدید آرکیٹکٹ فرینک گہری نے اس کا ڈیزائن بنایا تھا۔

 

 


ہاورڈ سنکوٹا، امریکی اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ سے وابستہ قلمکار اور مدیر ہیں۔

تبصرہ کرنے کے ضوابط