مرکز

مزید مضامین

  • مکّا بیٹ نامی کپیلا گروپ موسیقی اور یہودی مزاح کی آمیزش سے ایسا رجحان پیش کر رہا ہے جو عالمی طور پر کشش کا باعث ہے۔ 

  • امریکی صحافی وکٹوریہ لَوٹ مین اپنی کتاب دی وَینشنگ اسٹیپ ویلس آف انڈیا میں انڈیا کے مشہور و معروف اور فراموش کردہ کنؤوں کا ذکر کرتی ہیں۔ 

  • جنوب امریکی، افریقی اور یورپی روایات سے فروغ پائے ہوئے لاطینی رقص کے اقسام کی امریکہ میں دھوم مچی ہوئی ہے۔   

  • تھریٹی اُمریگر کے ناول عالمگیر انسانی تجربات اور قابلِ اطلاق کرداروں کا استعمال کرکے انڈیا اور امریکہ کے درمیان موجود ثقافتی تقسیم کی جستجو کرتے ہیں ۔   

  • جاپانی آنیمے اور منگا نے امریکی سائنس فکشن ، فنطاسیہ اور کامکس پڑھنے والے قارئین کو اپنا شیدائی بنا لیا ہے۔ 

  • امریکی موسیقی کے اقسام خواہ بہت مقبول ہوں یا پھر زیادہ پسند نہیں کئے جاتے ہوں لیکن ان میں دیگر ملکوں اور ثقافتوں کے اثرات ضرور پائے جاتے ہیں۔ 

  • جنوبی ایشیا کا اپنی نوعیت کا سب سے پہلا ایم آئی ٹی اومس گروپ بالی ووڈ کے کامیاب نغموں کا ویسٹرن پوپ میں امتزاج کرکے اپنی طرح کی ایک الگ جدید موسیقی تخیلق کرتا ہے۔

  • ہند نژاد امریکی موسیقار اور فل برائٹ اسکالر رینہ اسمعٰیل اپنی عملی زندگی اور بین ثقافتی تجربات پر اظہار خیال کر رہی ہیں ۔ 

  • امریکی فنکار گیری ہِل فنون لطیفہ میں ٹیکنالوجی کے اختراعی استعمال پر توجہ مرکوز کرتے ہیں۔

  • سان ڈیاگو کی انڈین فائن آرٹس اکیڈمی کا سالانہ تہوار انڈیا کے انواع و اقسام کے رقص اور موسیقی کی نمائش کرتا ہے ۔ 

  • امریکی ریاست اوہائیو کے شہر کلیو لینڈ میں ہونے والا کلیو لینڈ ۔ تیاگ راج فیسٹیول انڈیا کے باہرمنعقد ہونے والی انڈین کلاسیکل میوزک کی سب سے بڑی تقریب ہے۔ 

  • واشنگٹن ڈی سی کے فریئر | سَیکلر نگارخانوں میں انڈیا کی قدیم یادگاروں اور عصر حاضر کے شاہکاروں کے پُر اثر مجموعے موجود ہیں۔

  • سان ڈیاگو میوزیم آف آرٹ کو یہ امتیاز حاصل ہے کہ اس کی دست رس میں  ۱۲ویں صدی سے ۱۹ ویں صدی کے درمیان مغل، دکنی، راجستھانی اور پہاڑی درباروں کے لئے تیار کئے گئے ہندوستانی فن پاروں کے مجموعے ہیں۔ 

  • نیو یارک سٹی میں واقع بیٹری ڈانس کمپنی فنون لطیفہ کے ذریعہ بین الاقوامی سطح پر دوریوں کو پاٹنے کا کام کررہی ہے۔ 

صفحات

ویڈیوز اسپَین ویڈیو گیلری