مرکز
1 2 3

امریکہ میں مذہبی تنوع

رمضان کریم!
دنیا بھر میں رمضان المبارک کے مبارک مہینے کا آغاز ہورہا ہے۔ امریکہ میں بھی یہ مہینہ خصوصی اہمیت کا حامل ہے اور امریکی مسلمان اس ماہِ مبارک کو عبادت٬ خدمت خلق٬ رواداری اور روحانیت کو فروغ دینے والے ایک موقع کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔ اسپین ہرسال
امریکہ میں رمضان المبارک کے تعلق سے مضامین اور تصاویر پیش کرتا رہا ہے۔ پیش ہے امریکہ میں رمضان المبارک کی ایک جھلک۔
 
5 مئی 2019
 
رمضان المبارک کے موقع پر صدر ڈونلڈ جے ٹرمپ کا پیغام
 
میں رمضان کے مقدس مہینے میں اپنا مذہبی فریضہ انجام دینے والے تمام مسلمانوں کو دل کی گہرائیوں سے تہنیت بھیجتا ہوں۔ رمضان پیغمبر حضرت محمد پر قرآن مقدس کے نزول کی یاد دلاتا ہے۔ ہلالی چاند نظر آنے پر مسلمان خاندان اور لوگ باطنی فکر، روحانی تجدید اور عبادت کے مہینے کا آغاز کر کے اس نزول کی تعظیم کریں گے۔

رمضان کے دوران مسلمان سحر سے غروب آفتاب تک روزہ رکھتے ہیں، قرآنی اقتباسات کی تلاوت کرتے ہیں اور دوسروں کے ساتھ سخاوت اور خیرخواہی پر مبنی نیک افعال انجام دیتے ہیں۔ ایسا کرتے ہوئے وہ اپنی روحانی زندگی میں مقصد سے متعلق تجدیدی احساس پیدا کرتے ہیں اور خدا کے کرم و رحمت کے لیے بھرپور شکرگزاری کرتے ہیں۔

اس مہینے کے دوران ہم سبھی کے پاس خود کو عطا کردہ رحمتوں پر غوروفکر اور ایک دوسرے کے ساتھ ہمدمی کا جذبہ پیدا کرنے کے لیے کام کا موقع ہے۔ رمضان کے جذبے میں ہم سب مل کر ایک مزید ہم آہنگ اور بااخلاق معاشرہ تخلیق کرنے کا مقصد پا سکتے ہیں۔

میرے ساتھ میلانیا بھی امریکہ اور دنیا بھر میں رحمتوں بھرے اس مہینے کی آمد پر مسلمانوں کے لیے نیک خواہشات بھیجتی ہیں۔ 

صدر ٹرمپ اور اُن کے مہمان گزشتہ سال اسلام کے مقدس مہینے رمضان کے احترام میں وائٹ ہاؤس میں ہونے والے افطار ڈنر سے لطف اندوز ہو رہے ہیں۔ ( اینڈریو ہارنک/ © اے پی امیجز)

5 مئی 2019

رمضان المبارک کے موقع پر وزیر خارجہ پومپئو کا بیان

 

امریکی دفتر خارجہ کی جانب سے میں اندرون و بیرون ملک مسلمان برادریوں کے لیے رمضان مقدس کی آمد پر نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔

بہت سے مسلمانوں کے لیے یہ روحانی تجدید، مہربانی و رجوع، غریبوں کے لیے دردمندی اور متنوع معاشروں میں ہم آہنگی پر توجہ مرکوز کرنے کا موقع ہے۔ امریکہ میں بہت سی مساجد اور گھروں میں مختلف عقائد سے تعلق رکھنے والے دوستوں  اور ہمسایوں کا مساوات، رحم دلی اور فیاضی کی مشترکہ امریکی اقدار کے تحت خیرمقدم کیا جاتا ہے۔

گزشتہ ماہ تین ابراہیمی مذاہب کی عبادت گاہوں پر حملے ہوئے اور دنیا بھر میں فرد کے اپنے عقیدے پر آزادانہ عمل کی اہلیت کو سنگین مسائل درپیش ہیں۔ حکومتیں اور شہری سبھی کے لیے مذہبی آزادی کے فروغ کی خاطر اکٹھے کام کر کے اس نفرت پر قابو پا سکتے ہیں جو ایسے حملہ آوروں کو تحریک دیتی ہے۔ رمضان تمام عقائد اور پس منظر سے تعلق رکھنے والے لوگوں کو مشترکہ دردمندی، احترام اور ایک دوسرے کی مدد کی اہمیت یاد دلاتا ہے۔ روزانہ روزہ کھولنے اور دوسروں کو کھانے میں شریک کرنے کی بدولت رمضان ہمارے معاشرتی تعلقات میں مضبوطی لاتا اور سماجی خدمت پر زور دیتا ہے۔ اسی جذبے کے تحت ہم عقیدے سے قطع نظر ایک دوسرے کے لیے اپنی باہمی ذمہ داریوں پر غوروفکر اور بہترین فرد بننے کی سعی کرتے ہیں۔

دنیا بھر میں ہمارے بہت سے سفارت خانے اور قونصل خانے افطار استقبالیے دیتے ہیں جس سے ہماری سفارت کاری کی بنیادی طاقت کا اظہار ہوتا ہے اور مذہبی آزادی، مذہبی اقلیتی برادریوں کو اپنے ساتھ شامل کرنے اور ان کے احترام اور امن کے لیے شراکتوں بارے ہمارا عزم مزید تقویت پاتا ہے۔

رمضان کے مقدس مہینے کے آغاز پر میں تمام مسلمانوں کو پرمسرت رمضان کریم کی مبارک باد پیش کرتا ہوں۔ 

 

رمضان المبارک کے موقع پر دفتر خارجہ کی جانب سے محترمہ ہیلینا وہائیٹ کا پیغام

رمضان کے با برکت مہینے کی آمد پرامریکہ کی حکومت دنیا بھر کے مسلمانوں کو نیک خواہشات کا پیغام بھیجتی ہے۔ برصغیر کے مسلمانوں کے لئے اردو زبان میں یہ پیغام آپ تک پہنچا رہی ہیں لندن میں تعینات امریکی دفتر خارجہ کی جنوبی ایشیا کے لئے ترجمان محترمہ ہیلینا وہائیٹ:

 

 

صدر ٹرمپ کی میزبانی میں وائٹ ہاؤس میں افطار ڈنر(۲۰۱۸)

 

 
اسلام کے مقدس مہینے رمضان کے حوالے سے صدر ٹرمپ نے 6 جون 2018 کو اپنے پہلے افطار ڈنر کی میزبانی کی۔
یہ تقریب ریپلیکن اور ڈیموکریٹ پارٹیوں کے صدور کی روایات کو آگے بڑہاتے ہوئے وائٹ ہاؤس کے سرکاری ضیافت خانے میں منعقد کی گئی۔
مسلمان اکثریت والے ممالک کی نمائندگی کرنے والے سفراء سمیت، صدر ٹرمپ نے سفارتی برادری کے اراکین کو افطار ڈنر پر خوش آمدید کہا۔ انہوں نے کہا، "آپ میں سے ہر ایک کو اور دنیا بھر کے مسلمانوں کو رمضان مبارک۔"
صدر نے کہا، "ایسے میں جب ہم وائٹ ہاؤس میں ایک شاندار ڈنر سے لطف اندوز ہو رہے ہیں، آئیے ہم سب مل کر اُس وقار اور خیر سگالی کو منائیں جو ماہ رمضان کا خاصہ ہے۔"
2017 تک امریکی مسلمانوں کی آبادی اندازاً 34 لاکھ 50 ہزار یا امریکہ کی مجموعی آبادی کا 1.1 فیصد تھی۔ پیو ریسرچ سنٹر کے مطابق 2050ء  تک اس تعداد کے دوگنا ہونے کی توقع ہے۔
امریکہ میں رمضان کا اختتام 14 جون کو ہو رہا ہے۔
(بہ شکریہ https://share.america.gov)
 
مزید مضامین
 
 

تبصرہ کرنے کے ضوابط